اسلام ٴ ایمان اور احسان

(2)عَنۡ عُمَرَ بِنۡ الۡخَط­َاب رضی ﷲ عنہ قَالَ بَیۡنَهُمَا نَحۡنُ عِنۡدَرَسُوۡلِ الل­ٰہ صلی ﷲ علیہ وسلم ذَاتَ یَوۡمٍ اِذۡ طَلَعَ عَلَیۡنَارَجُلٌ شَدِیۡدُ بَیَا ضِ الثِ­یَابِ شَدِیۡدُسَوَادِ الش­َعۡرِ لَا یُریٰ عَلَیۡہِ اَثَرُ الس­َفۡرَ وَلَا یَعۡرِفُہٌ مِن­َا اَحَدٌ جَلَسَ اِ لَی الن­َبِیِ­صلی ﷲ علیہ وسلمَ فَاَسۡنَدَ رُکۡبَتَیۡہِ اِلٰی رُکۡبَتَیۡہِ وَوَ ضَعَ کَف­َیۡہِ عَلیٰ فَخِذَیۡہِ وَقَا لَ یَا مُحَم­َدُ اَخۡبِرۡنِیۡ عَنِ الۡاِسۡلاَمِ؟ فَقَا لَ رَسُوۡلُ الل­ٰہِصلی ﷲ علیہ وسلم اَلۡاِسۡلَامَ اَنۡ تَشۡهَدَ اَنۡ ل­َا اِلٰہَ اِلا­َ الل­ٰہُ وَاَن­َ مُحَم­َداً ر­َسُوۡلُ الل­ٰہِ وَتُقِیۡمَ الص­َلوٰةَ وَتُوۡتِیۡ الز­َکوٰةَ وَتَصُوۡمَ رَمَضَانَ وَتَحُجُُ الۡبَیۡتَ اِنِ اسۡتَطَعۡتَ اِلَیۡہِ سَبِیۡلًا ، قَا لَ صَدَقۡتَ قَالَ فَعَجِبۡنَا لَہٌ یَسۡائَلُہٌ وَیُصَدِ­قُہٌ قَا لَ فَاَخۡبِرۡنِیۡ عَنِ الۡاِیۡمَانِ؟ قَالَ اَنۡ تُوئۡمِنۡ بِا لل­ٰہِ وَمَلٰئِکَتِہ° وَ کُتُبِہ° وَرُسُلِہ° وَالۡیَوۡمِ الۡاٰخِرِ وَتُوۡمِنُ بَا لۡقَدۡرِ خَیۡرِہ° وَشَرِ­ہ° قَالَ صَدَقۡتَ، قَا لَ فَاَ خۡبِرۡنِیۡ عَنِ الۡاِحۡسَانِ؟ قَالَ اَنۡ تَعۡبُدَ الل­ٰہَ کَاَن­َکَ تَرَاہُ فَاِنۡ ل­َمۡ تَکُنۡ تَرَاہُ فَاِن­َہٌ یَرَاکَ قَا لَ فَاَخۡبِرۡنِیۡ عَنِ الس­َاعَةِ؟ قَالَ مَا الۡمَسۡئُوۡلُ عَنۡهَا بِاَعۡلَمَ مِنَ الس­َا ئِلِ، قَالَ فَاَخۡبِرۡنِیۡ عَنۡ اِمَارَتِهَا قَالَ اَنۡ تَلِدَ الۡاَمَةُ رَب­َتَهَا وَاَنۡ تَرَی الۡحُفَا ةَ الۡعَرَاةَ الۡعَالَةَ رَعَاءً الش­َا ءِ یَتَطَاوَلُوۡنَ فِیۡ الۡبُنۡیَانِ قَالَ ثُم­َ انۡطَلَقَ فَلَبِثۡتُ مَلِی­ًا ثُم­َ قَالَ لِیۡ یَا عُمَرُاَتَدۡرِیۡ مَنِ الس­َائِلُ؟ قُلۡتُ الل­ٰہُ وَرَسُوۡلُہٌ اَعۡلَمُ قَالَ فَاِن­َہٌ جِبۡرَئِیۡلُ اَتَا کُمۡ یُعَلِ­مُکُمۡ دِیۡنَکُمۡ      

(رواہ مسلم)

ترجمہ:۔حضرت عمر رضی ﷲ عنہ سے روایت ہے کہ ہم ایک دن رسول ﷲ صلی ﷲ علیہ وسلم کی خدمت میں حاضر تهے (اسی حدیث کی ایک دوسری روایت سے معلوم ہوتا ہے کہ اس وقت مجلس مبارک میں صحابہ رضی ﷲ عنہ  کا ایک مجمع تها اور حضرت اُن سے خطاب فرما رہے تهے(فتح)کہ اچانک ایک شخص سامنے سے نمودار ہوا، جس کے کپڑے نہایت سفید اور بال بہت ہی زیادہ سیاہ تهے۔ اور اُس شخص پر سفر کا کوئی اثر معلوم نہیں ہوتا تها،(جس سے خیال ہوتا تها کہ یہ کوئی بیرونی شخص نہیں ہے) اور اسی کے ساتھ یہ بات بهی تهی کہ ہم میں سے کوئی شخص اس نو وارد کو پہچانتا نہ تها) جس سے خیال ہوتا تها کہ یہ کوئی باہر کا آدمی ہے، تو یہ حاضرین کے حلقہ میں سے گزرتا ہوا آیا) یہاں تک کہ رسول ﷲ صلی ﷲ علیہ وسلم کے سامنے آ کر دوزانوں اس طرح بیٹھ گیا کہ اپنے گهٹنے آنحضرت صلی ﷲ علیہ وسلم کے گهٹنوں سے ملا دئیے۔ اور اپنے ہاتھ حضورصلی ﷲ علیہ وسلم کی رانوں پر رکھ دئیے اور کہا اے محمد صلی ﷲ علیہ وسلم امجهے بتلائیے کہ ٴٴاسلامٴٴ کیا ہے؟ آپ صلی ﷲ علیہ وسلم نے فرمایا ٴٴاسلامٴٴ یہ ہے (یعنی اس کے ارکان یہ ہیں کہ دل و زبان سے(تم یہ شہادت ادا کرو کہ ٴٴﷲٴٴ کے سوا کوئی ٴٴالٰہٴٴ (کوئی ذات عبادت و بندگی کے لائق )نہیں ٴاور محمد صلی ﷲ علیہ وسلم اس کے رسول ہیں ٴ اور نماز قائم کرو،اور زکوٰة ادا کرو ، اور ماہ رمضان کے روزے رکهو، اور اگر حج بیت ﷲ کی تم استطاعت رکهتے ہوتو حج کرو،۔۔۔ اس نوارد سائل نے آپصلی ﷲ علیہ وسلم کا جواب سن کر کہا، آپصلی ﷲ علیہ وسلم نے سچ کہا ۔۔ راویئ حدیث حضرت عمررضی ﷲ عنہ کہتے ہیں کہ ہم کو اس پر تعجب ہوا کہ یہ شخص پوچهتا بهی ہے اور پهر خود تصدیق و تصویب بهی کرتا جاتا ہے، ۔۔۔ اس کے بعد اس شخص نے عرض کیا اب مجهے بتلائیے کہ ٴٴایمانٴٴ کیا ہے؟ آپصلی ﷲ علیہ وسلم نے فرمایا ایمان یہ ہے کہ تم ﷲ کو اور اُس کے فرشتوں اور اس کی کتابوں اور اس کے رسولوں اور یوم آخر یعنی روز قیامت کو حق جانو، اور حق مانو اور ہر خیر و شر کی تقدیر کو بهی حق جانو اور حق مانو،(یہ سن کربهی)اس نے کہا، آپصلی ﷲ علیہ وسلم نے سچ کہا۔۔۔ اس کے بعد اس شخص نے عرض کیا، مجهے بتلائیے کہ احسان کیا ہے؟ آپصلی ﷲ علیہ وسلم نے فرمایا احسان یہ ہے کہ ﷲ کی عبادت و بندگی تم اس طرح کرو گویا تم اس کو دیکه رہے ہو، کیونکہ اگرچہ تم اس کو نہیں دیکهتے ہو پر وہ تو تم کو دیکهتا ہی ہے، پهر اس شخص نے عرض کیا مجهے قیامت کی بابت بتلائےں (کہ وہ کب واقع ہو گی)آپصلی ﷲ علیہ وسلم نے فرمایا کہ جس سے یہ سوال کیا جا رہا ہے وہ اس کو سوال کرنے والے سے زیادہ نہیں جانتا۔ پهر اس نے عرض کیا تو مجهے اس کی کچه نشانیاں ہی بتلائیے؟ اۡپصلی ﷲ علیہ وسلم نے فرمایا (اس کی ایک نشانی تو یہ ہے کہ)لونڈی اپنی مالکہ اور آقا کو جنے گی، (اور دوسری نشانی یہ ہے کہ)تم دیکهو گے کہ جن کے پائوں میں جوتا اور تن پر کپڑا نہیں ہے، اور جو تہی دست اور بکریاں چرانے والے ہیں وہ بڑی بڑی عمارتیں بنانے لگیں گے اور اس میں ایک دوسرے پر بازی لے جانے کی کوشش کریں گے۔۔۔ حضرت عمررضی ﷲ عنہ کہتے ہیں کہ یہ باتیں کر کے یہ نو وارد شخص چلا گیا ، پهر مجهے کچه عرضہ گزر گیا ، تو حضورصلی ﷲ علیہ وسلم نے مجه سے فرمایا ، اے عمرا کیا تمہیں پتہ ہے کہ وہ سوال کرنے والا شخص کون تها؟ میں نے عرض کیا، ﷲ اور اس کا رسول ہی زیادہ جاننے والے ہیں، آپصلی ﷲ علیہ وسلم نے فرمایا کہ وہ جبرئیل تهے، تمہاری اس مجلس میں اس لئے آئے تهے کہ تم لوگوں کو تمہارا دین سکها دیں۔